بیٹیاں واقعی اللہ تعالٰی کی رحمت ہوتی ہیں،سبق آموز واقعہ

نیشنل نیوز! اکثر لوگ بیٹیوں کو بوجھ سمجتے ہے۔ لیکن جتنا پیار والدین کے لیے بیٹی کے دل میں ہوتا ہے۔ وہ شاید بہت کم بیٹوں کے دل میں اتنا پیار ہو۔ اج ہم اپ کو ایسا ہی ایک سچہ واقعہ سناتے ہے۔ 20ﺳﺎﻟﮧ ﺑﯿﭩﯽ ﻭﻻﺀﺍﺳﻤﺎﻋﯿﻞ ﻋﺎﺷﻮﺭ ﺍﻟﺼﺎﺋﻎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﺋﮯ ﺑﻐﯿﺮﮔﺮﺩﮮ ﮐﺎ ﻧﺬﺭﺍﻧﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﮐﮯ ﻣﺴﻠﺴﻞ 3 ﺳﺎﻟﮧ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺳﮯ ﻧﺠﺎﺕ ﺩﻻﺩﯼ۔

ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺍﻧﻮﮐﮭﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﺍﮨﻞ ﺧﺎﻧﮧ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﻘﻠﯿﺪ ﻣﺜﺎﻝ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ۔ ﻭﻻﺀﻧﮯ ﺍﻟﻌﺮﺑﯿﮧ ﻧﯿﭧ ﺳﮯ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ۔ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺗﯿﻦ ﺑﺮﺱ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﻮ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﯽ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﻣﯿﮟ ﺗﮍﭘﺘﺎ ﮨﻮﺍ ﺩیکھ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ﻭﮦ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﯽ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﮑﮯ ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺎﺋﭗ ﺩیکھ ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺩکھ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﺎ ﻋﻄﯿﮧ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﺭﺍﺿﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ۔ ﺣﺎﻟﯿﮧ ﺍﯾﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﻔﺘﮯ ﻣﯿﮟ 3 ﺑﺎﺭ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﯽ ﺻﻔﺎﺋﯽ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺳﭙﺘﺎﻝ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﺮﺩﮮ ﮐﮯ ﻋﻄﯿﮯ ﮐﺎ ﺗﺬﮐﺮﮦ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﭨﯿﺴﭧ ﻟﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﮔﺮﺩﮦ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻣﯿﭻ ﮐﺮﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻟﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﺬﮐﺮﮦ ﮐﯿﺎ۔ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺭﺿﺎﮐﺎﺭﺍﻧﮧ ﻃﻮﺭﭘﺮ ﮔﺮﺩﮦ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﯿﮞاس ﺳﮯ ﺁﭖ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺳﮯ ﺑﭻ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ۔ﺗﺒﻮﮎ ﺳﭩﯽ ﻣﯿﮟ ﺁﺭﻣﯽ ﺍﺳﭙﺘﺎﻝ ﻧﮯ ﺩﻥ ﺍﻭﺭ ﻭﻗﺖ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﮯ ﺳﺎتھ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺿﺪ ﮐﯽ۔ ﻭﮦ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮑﯽ ﻻﻋﻠﻤﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﺭﻭﻡ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ۔ 7 ﮔﮭﻨﭩﮯ ﻃﻮﯾﻞ ﺁﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ یہ عمل مکمل ہو گیا۔ اس عمل کے بعد جب ﻭﺍﻟﺪ ﮐﯽ ﺁنکھ ﮐﮭﻠﯽ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﺍﺋﯿﮟ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﮍ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮑﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﮯ ﺑﯿﮉ ﭘﺮ ﺍﺳﯽ ﻟﺒﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﭩﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﯿﺴﺎ ﻟﺒﺎﺱ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﭘﮩﻨﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ﻭﮦ سمجھ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﮔﺮﺩﮦ ﻋﻄﯿﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﺭﺍﺿﯽ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﻓﺮﺽ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﮔﺮﺩﮦ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﻭﮞ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺘﻨﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯿﺎﮞ ﺩﯼ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﺑﮭﯽ۔ واضح رہے کے بیٹیوں نے ہر دور میں تکلیف انے پر بے مثال قربانی دی ہے۔

Sharing is caring!

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *