پینتیس سال کی عمر کے بعد بچہ پیدا کرنے کا انتہائی تشویشناک نقصان سائنسدانوں نے بے نقاب کردیا ،ضرور دیکھیں

اوٹاوا(تازہ خبر 92) بعض خواتین کی شادی ہی زیادہ عمر میں ہوتی ہے لیکن بعض جلد شادی ہونے کے باوجود کیریئر یا دیگر وجوہات کی بناءپر زیادہ عمر میں جا کر بچے پیدا کرنے کو ترجیح دیتی ہیں۔ اب ایسی زائد العمر خواتین کے ہاں پیدا ہونے والی لڑکیوں کے متعلق سائنسدانوں نے خوفناک انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق نئی تحقیق میں سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ ”جو خواتین 35سال سے زائد عمر میں بچہ پیدا کریں اور ان کے ہاں

لڑکی پیدا ہو تو آگے چل کر اس لڑکی کے بانجھ ہونے کے امکانات نوعمر خواتین کے ہاں پیدا ہونے والی لڑکیوں کی نسبت 40فیصد زیادہ ہوتے ہیں

اوٹاوا(مانیٹرنگ ڈیسک) بعض خواتین کی شادی ہی زیادہ عمر میں ہوتی ہے لیکن بعض جلد شادی ہونے کے باوجود کیریئر یا دیگر وجوہات کی بناءپر زیادہ عمر میں جا کر بچے پیدا کرنے کو ترجیح دیتی ہیں۔ اب ایسی زائد العمر خواتین کے ہاں پیدا ہونے والی لڑکیوں کے متعلق سائنسدانوں نے خوفناک انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق نئی تحقیق میں سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ ”جو خواتین 35سال سے زائد عمر میں بچہ پیدا کریں اور ان کے ہاں

لڑکی پیدا ہو تو آگے چل کر اس لڑکی کے بانجھ ہونے کے امکانات نوعمر خواتین کے ہاں پیدا ہونے والی لڑکیوں کی نسبت 40فیصد زیادہ ہوتے ہیں

Sharing is caring!

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *