ایک جرمن شہری نے میدان عشق میں انوکھی مثال قائم کر دی ، پوری دنیا حیران –

میونخ (ویب ڈیسک) ایک جرمن باشندے نے بیوی کی نگہداشت کرنے کی صلاحیت سے محروم ہونے کے احساس اور اُس سے جدا نہ ہونے کی خواہش پوری نہ ہوتے دیکھنے کے سبب بیوی کا مُنہ دبا کر، اس کی سانس روک دی۔ایک 90 سالہ جرمن شخص نے 70 سالہ ازدواجی زندگی ساتھ گزارنے کے

بعد ڈیمینشا کی شکار 91 سالہ بیوی کو زندگی سے محروم کر دیا تھا۔ اُس کا دعویٰ ہے کہ اُس نے اپنی بیوی کی محبت میں یہ قدم اُٹھایا ۔جرمن صوبے بویریا کے ایک شہر ‘گمُنڈ‘ سے تعلق رکھنے والے اس شخص نے وُرسبرگ کی علاقائی عدالت کے سامنے اس مجرمانہ کارروائی کا اقرار کرتے ہوئے کہا تھا کہ اُس نے ایسا خود غرضی کے تحت نہیں بلکہ اپنی بیوی کی محبت میں کیا ہے۔ اُس نے عدالت کے سامنے بیان میں مزید کہا،”میں کئی دہائیوں تک اپنی بیوی کی خدمت کی اور اُس کی دیکھ بھال کرتا رہا، تاہم وہ ڈیمینشیا کے عارضے میں مبتلا ہونے کے سبب جس قدر اذیت میں تھی، کسی نا کسی نے تو اُس کی مشکل آسان کرنا ہی تھی۔ میں اُس کی تکلیف مزید نہیں دیکھ سکتا تھا۔‘‘ عدالت نے 12 نومبر 2020 ء جمعرات کے روز اس 92 سالہ شخص کی دو سال کی سزا کو معطل کر نے کا اعلان کیا۔ اس نے اپنی بیوی کا نومبر 2019 ء میں مُنہ کمبل میں دبا کر سانس روک دی تھی۔1928ء میں پیدا ہوا۔ جوانی دوسری ورلڈ وار میں گزاری، فرار پھر گھر واپسی، تعلیم حاصل کی، بعد ازاں مصوری کی اشیاء کی دکان کھول لی۔ شادی کے بعد تب بھی ایک خوشگوار رندگی گزرا رہا تھا۔ دفاعی وکیل نے اپنے موکل کی سوانح پر روشنی ڈالتے ہوئے عدالت کے سامنے کہا کہ یہ اس کی تمام زندگی کی روداد ہے جس کے آخری دنوں میں یہ شخص مکمل طور پر ٹوٹا اور بکھرا ہوا انسان معلوم ہوتا ہے۔ اس شخص نے اپنے بیان میں کہا تھا،” میں اور میری بیوی 70 سال سے ازدواجی زندگی گزار رہے تھے۔ ہنسی خوشی ایک خوشحال جوڑے کی مانند تھے۔‘‘

اس کی بیوی ڈیمینشیا کے عارضے میں مبتلا تھی، کئی دہائیوں سے وہ اپنی بیوی کی دیکھ بھال خود کر رہا تھا۔ اُس کے بقول،” گھر میں کسی شدید بیمار فرد کی دیکھ بھال کرنے کی دشواریوں کے سبب زندگی کی امنگ اور طاقت دونوں ختم ہوتی چلی گئی۔‘‘ یہ شخص 24 گھنٹے اپنی بیوی کی تیمارداری، اُس کی دیکھ بھال کیا کرتا تھا یہاں تک کہ وہ 91 سال کی عمر کو پہنچ گئی۔ ملزم آخر میں تھک چُکا تھا بیوی کی نگہداشت اب اُس کے لیے ممکن نہیں رہی تھی اور وہ اپنی بیوی کو ‘معمر لوگوں کی دیکھ بھال کے مراکز‘ نہیں بھیجنا چاہتا تھا۔ ان دونوں نے ساتھ مرنے کی خواہش کی تھی۔اس شخص پر عائد فرد جرم کے مطابق جس رات اس شخص نے یہ جرم کیا بہت سارے نفسیاتی اور جذباتی عناصر اکٹھا اُس پر غالب آ گئے۔ اُسے پتا تھا کہ اُس کی بیوی کسی نا کسی صورت اُس سے جدا ہونے والی ہے۔ دوسرے یہ کہ وہ جسمانی اور اعصابی طور پر اپنی رفیق حیات کی خدمت اور دیکھ بھال کرتے کرتے تھک چُکا تھا۔ 2019 ء نومبر کی ایک رات اس شخص نے اپنے بیڈ روم میں اپنے بستر پر پڑی اپنی بیوی کے مُنہ پر کمبل ڈال کر اُس کی سانس روک دی۔ یہ شخص اپنے آپ سے کہہ رہا تھا،”میں اپنی بیوی کی کوئی نگہداشت نہیں کر سکتا،اب یہ ممکن نہیں رہا۔‘‘ 3 نومبر کو ریاست بویریا کے شہر ورسبرُگ کی عدالت میں مقدمے کی سماعت کے دوران اس شخص نے تاسف بھرے لہجے میں اس جرم کا اعتراف کرتے ہوئے کہا تھا ،” میں نے اپنی بیمار بیوی کی مشکل آسان کرنے کی غرض سے اُس کے مُنہ کو کمبل سے دبا دیا۔‘‘ماہر نفسیات اور وکلاء سب ہی کا یہ کہنا ہے کہ یہ شخص متعدد ڈپریشن کا شکار رہا ہے اور اس کی ذہنی اور جذباتی صورتحال بتاتی ہے کہ اس نے جو کیا وہ اپنی کیفیت کے سبب کیا۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *