خیبرپختونخوا میں گیس منصوبہ کس حکومت نے پورا کیا؟(ن) لیگ اور پی ٹی آئی میں نئی جنگ شروع ہو گئی

مردان (ویب ڈیسک)خیبرپختونخوا میں گیس منصوبے کے افتتاح کے موقع پر حکمران جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور اپوزیشن جماعت مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں کے درمیان ہاتھا پائی ہوگئی۔مردان کے علاقے تخت بائی میں گیس منصوبے کا افتتاح وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے کرنا تھا۔تاہم ن لیگی کارکنان نے

کہا کہ منصوبہ ہماری حکومت کے فنڈز سے مکمل ہوا ہے، جس کا افتتاح پی ٹی آئی کو ہرگز نہیں کرنے دیں گے۔اس موقع پر پی ٹی آئی اور ن لیگ کے کارکن آمنے سامنے آگئے، جن کے درمیان ہاتھا پائی بھی ہوئی۔پولیس نے موقع پر پہنچ کر ن لیگ اور پی ٹی آئی کے کارکنوں کو منتشر کر دیا۔تخت بائی میں کشیدہ حالات کے باعث افتتاحی تقریب ملتوی کردی گئی۔قبل ازیں صوبے خیبرپختونخوا میں گیس نیٹ ورک کی توسیع اور بحالی کے منصوبے کا آغاز ہونا تھا۔تسنیم خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق، سوئی ناردرن کمپنی کے ترجمان نے کہا ہے کہ پختون خوا میں گورنر کے پی، وزیر اعلیٰ اور وفاقی وزیر گیس نیٹ ورک کی توسیع اور بحالی کے منصوبے کا افتتاح کریں گے۔یہ منصوبہ یو ایف جی نقصانات پر قابو کے لیے 14 سیلز میٹر اسٹیشنز کے تحت بنایا گیا ہے، ترجمان کے مطابق منصوبے میں کرک، کوہاٹ اور ہنگو کے دیہات کو شامل کیا گیا ہے، ان دیہات میں گیس نیٹ ورک کی تعمیر کے ساتھ ساتھ موجودہ نیٹ ورک کی بحالی بھی کی جائے گی۔سوئی ناردرن کے ترجمان کا کہنا تھا کہ مجموعی ڈسٹری بیوشن نیٹ ورک 2677 کلو میٹر طویل ہوگا، اس منصوبے کی کُل لاگت 9 ارب روپے ہوگی، پہلے مرحلے میں کمپنی 512 کلو میٹر طویل نیٹ ورک بچھائے گی، اور اس سے 48 دیہات کے 19 ہزار صارفین کو فائدہ پہنچے گا۔خیال رہے کہ ملک میں سردیاں بڑھتے ہی گیس بحران نے پورے ملک کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، جس کے باعث گھروں کے چولھے بھی جلنا مشکل ہو گیا ہے۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *