چیئرمین نیب کی ریکارڈنگ لیک اصل معاملہ کیا ہے ؟Leaked Video of Chairman NAB

آج سوشل میڈیا پہ چیئرمین نیب کے متعلق مختلف تبصرے سن کر آپ بھی سوچ رہے ہوں گے کہ آخر معاملہ کیا ہے ؟

چیئرمین نیب

بات کچھ یوں ہے کہ ٹی وی ون نامی نیوز چینل چیئرمین نیب کی ایک لڑکی سے رومانٹک گفتگو کی آڈیو کلپ نشر ہونے کے بعد ہنگامہ مچ گیا ہے۔ آڈیو کلپ میں چیئرمین نیب کسی لڑکی سے بات کرتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ آپ نے چپ کا روزہ رکھا ہوا ہے تو لڑکی کہتی ہے کہ نہیں میں ناراض ہوں اور آپ مجھے منائیں تو چیئرمین نیب کہتا ہے کہ آپ میرے پاس ہوتیں تو پتہ ہے کیسے مناتا ؟ سر سے لے کر پاؤں تک چومتا ۔ لڑکی کہتی ہے اس کا مطلب میں ناراض ہی رہوں پھر۔۔۔ بس لگ گئی پاکستانیوں کو آگ۔ ہائے سر سے پاؤں تک چومنے والی بات۔۔۔ بس تبصرے شروع ، میمز بن گئے ٹرینڈ بن گیا۔

اب آگے سنیں اس نشریات کے بعد اس ٹی وی چینل نے معافی مانگ کر اس بیان کی تردید کی ہے مگر چونکہ ہم پاکستانی قوم جب تک شک نہ کریں کون پاکستانی مانے۔

اب کچھ لوگ کہہ رہے فوج کو اچھا نہیں لگا اس لیے نشریات رکوا دیں ورنہ چیئرمین نیب واقعی ملزم ہے۔ دوسری طرف کچھ لوگ کہہ رہے ہیں نیوز چینل والوں نے فیک آڈیو بنائی ہے۔

بہرحال اگر مجموعی طور پر دیکھا جائے تو چیئرمین نیب کا ذاتی معاملہ ہے چلو وہ کسی سے رومانٹک باتیں کر رہے ہیں کوئی کرپشن یا کسی ایسے جرم میں ملوث تو نہیں کہ انہیں چیئرمین کے عہدے سے ہٹایا جائے لیکن چونکہ اب بدنامی ہو چکی ہے اس لیے تحقیقات کی جائیں اگر مجرم ہیں تو آئین کے تحت سزا دی جائے ورنہ اس نیوز چینل کے خلاف قانونی کاروائی کی جائے مگر اب یہاں سوال یہ ہے کہ یہ فون کال ریکارڈنگ اس ٹی وی رپورٹر کے پاس کیسے آئے ؟ کیا ہمارا پرسنل ڈیٹا کوئی بھی صحافی اتنی آسانی سے نکال سکتا ہے ؟ اگر ایسا ہے تو ان موبائل کمپنیوں کے خلاف بھی کاروائی ہونی چاہیئے ۔
اگر موبائل فون ریکارڈنگ کسی صحافی کو مل بھی گئے تو اسے کیا حق ہے کہ وہ اسے اپنے چینل کو بھیجے اور چینل کو کیا حق ہے کہ وہ کسی کی پرسنل گفتگو سرعام نشر کرے ؟

بہرحال ملک پاکستان میں کچھ بھی ہو سکتا ہے کوئی بھی چینل ریٹنگ کے چکر میں کسی کو بھی بدنام کر سکتا ہے تو کوئی بھی اعلی عہدیدار اپنے اختیارات استعمال کرتے ہوئے کسی بھی خاتون کے ساتھ اس طرح کے تعلقات قائم کر سکتا ہے تو ہم پاکستانی عوام کو صرف تماشا دیکھنا ہوتا ہے اور تالیاں بجانی ہوتی ہیں۔
اس سکینڈل کا نتیجہ کیا ہوگا ہمیں اس سے غرض نہیں کیونکہ ہمیں پورے ہفتے کے لیے سوشل میڈیا پہ پوسٹ کرنے کے لیے ایک اچھا موضوع مل گیا ہے ، باقی چیئرمین نیب جانے تے ٹی وی چینل والے جانیں۔

دوستوں سے شیئر کریں

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

تبصرہ کریں