شاعر مصطفی زیدی

غمِ دوراں نے بھی سیکھے غمِ جاناں کے چلن​
وہی سوچی ہوئی چالیں وہی بے ساختہ پن​

وہی اقرار میں انکار کے لاکھوں پہلو​
وہی ہونٹوں پہ تبسم وہی ابرو پہ شکن​

کس کو دیکھا ہے کہ پندارِ نظر کے باوصف​
ایک لمحے کے لئے رک گئی دل کی دھڑکن​

کونسی فصل میں اس بار ملے ہیں تجھ سے​
ہم کو پرواہِ گریباں ہے نہ فکرِ دامن​

اب تو چبھتی ہے ہوا برف کے میدانوں کی​
ان دنوں جسم کے احساس سے جلتا تھا بدن​

ایسی سونی تو کبھی شامِ غریباں بھی نہ تھی​
دل بجھے جاتے ہیں اے تیرگئ صبحِ وطن​

مصطفی زیدی

دوستوں سے شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں