پروفائل پکچر کی تیاری

پروفائل پکچر کی تیاری

تحریر:رفاقت حیات

چدائی

پکچر

ایسے نہیں بنتی پروفائل پکچرز,ان کے پیچھے بڑی محنت ہوتی ہے۔کم سے کم تین ایپس کی خدمات حاصل کرکے کہیں ایک عام تصویر پروفائل پکچر کا درجہ حاصل کرتی ہے۔
آپ نے فقط دو سیکنڈز کے اندر "نائس پک ڈیئر" لکھ دینا ہے۔جبکہ "صاحب پکچر" کے دو گھنٹے صرف ہوئے پڑے ہوتے ہیں۔
خاندان بھر میں جرگہ بلایا جاتا ہے۔ہر ایک سے مشورہ کیا جاتا ہے کہ کونسی پکچر پروفائل کے لیے موزوں ہے۔سیکڑوں تصویریں ریجیکٹ ہوجاتی ہیں۔تب جاکر کہیں ایک آدھ کام کی نکل پاتی ہے۔
پھر اسے تمام آداب بروئے کار لاتے ہوئے بیوٹی ایپس کے حوالے کیاجاتا ہے۔جہاں مختلف آلاتِ مرمت و درستی سے اسے ہرزوایے سے ٹھیک کیاجاتا ہے۔کبھی برائیٹنس زیادہ کی جارہی ہوتی ہے تو کبھی اور زیادہ۔کم کرنے کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ طرح طرح کے فلٹرز لگا کر چیک کیا جاتا ہے کہ کہیں زکوٹا جن ہونے کا اثرات واضح تو نہیں ہیں؟۔کبھی موبائل کو قریب کرکے تصویر دیکھی جاتی ہے تو کبھی دور کرکے,کیسی لگ رہی ہے؟
جب ہر طرح کی تسلی ہوجاتی ہے تو اسے فیس بک پر "لانچ" کردیا جاتا ہے۔اگر تصویر اچھی ہوتو جہاں لائکس زیادہ آتے ہیں وہیں فرینڈ ریکوایسٹس میں بھی برکت آجاتی ہے۔اور اگر "نامناسب" ہو تو نقصان کا بھی احتمال رہتا ہے۔

دوستوں سے شیئر کریں

تبصرہ کریں