اٹھ میری جان سحر آ پہنچی۔ حماقتیں

اٹھ میری جان سحر آ پہنچی

حماقتیں شفیق الرحمن

چائے

ﺍﭨﮫ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ ، ﺳﺤﺮ ﺁﭘﮩﻨﭽﯽ
ﺍﭨﮫ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ کہ ﺷﺐ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺋﯽ
ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﭘﮭﯿﮑﯽ ﮨﮯ ، ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﭼﻤﮏ ﻣﺪﮬﻢ ﮨﮯ
ﺻﺒﺢِ ﺻﺎﺩﻕ ﮐﺎ ﺍﺟﺎﻻ ﭘﮭﯿﻼ
ﺍﭨﮫ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ ، ﭼﻤﻦ ﺟﺎﮒ ﺍﭨﮭﺎ
ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻏﻨﭽﮯ ﺟﺎﮔﮯ
ﮐﻠﯿﺎﮞ ﺷﺮﻣﺎﻧﮯ ﻟﮕﯿﮟ
ﺍﻭﺭ ﺍﭨﮭﻼﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺑﺎﺩِ ﻧﺴﯿﻢ
ﭘﮭﻮﻝ ﺍﻧﮕﮍﺍﺋﯿﺎﮞ ﻟﯿﺘﮯ ﺍﭨﮭﮯ
ﺗﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﭽﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺧﻮﺍﺏ
ﺗﯿﺮﺍ ﻣﺨﻤﻮﺭ ﺷﺒﺎﺏ
ﺗﯿﺮﮮ ﻋﺎﺭﺽ ﮐﮯ ﮔﻼﺏ
ﺍﺑﮭﯽ ﻣﺪﮨﻮﺵ ﮨﯿﮟ ، ﻣﺨﻤﻮﺭ ﮨﯿﮟ ، ﺧﻮﺍﺑﯿﺪﮦ ﮨﯿﮟ
ﺍﭨﮫ ﻣﺮﯼ ﺟﺎﻥ ، ﺳﺤﺮ ﺁ ﭘﮩﻨﭽﯽ

ﺍﭨﮫ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﭼﺎﺋﮯ ﺑﻨﺎ !

ﺷﻔﯿﻖ ﺍﻟﺮﺣﻤٰﻦ #حماقتیں

دوستوں سے شیئر کریں

تبصرہ کریں