فوٹوگرافی - چند بنیادی اصطلاحات کی وضاحتیں - عامر مغل

فوٹوگرافی - چند بنیادی اصطلاحات کی وضاحتیں

عامر مغل 

عکس عامر

عامر مغل

اگر آپ فوٹوگرافی میں دلچسپی رکھتے ہیں اور اکثر اوقات کیمرے سے اچھی آرٹسٹک تصاویر بنانے کا ذوق رکھتے ہیں تو چند ایک بنیادی باتوں کا آپ کو علم ہونا ضروری ہے جنکا ہم آگے جا کے تذکرہ کریں گے۔ سب سے پہلی بات کہ آپ کے پاس کیمرہ کون سا ہے ۔۔۔ آج کل ڈیجیٹل، ایڈوانس ڈیجیٹل، ایس ایل آر اور ڈی ایس ایل آر کا دور ہے۔ ڈیجٹیل Point n Shoot کے لیۓ ہیں جس میں تقریبا فنکشنز آٹومیٹک ہوتے ہیں جس کیوجہ سے آپ ان فنکشنز کی لمٹ سے باہر نہیں جا سکتے۔ DSLR پروفیشنل کمیرا بھی کہلاتے ہیں۔ اس میں آپ کے پاس کافی چوائسز ہوتی ہیں ۔۔ مثلا ضرورت کے مطابق لینز تبدیل کرنے کی، اپریچر، شٹر سپیڈ، فوکل لینتھ اور ایکسپوژر وغیرہ پہ کنٹرول ۔۔۔۔۔ مطلب جتنا گڑ ڈالتیں جائیں اتنا میٹھا کرتے جائیں۔

ایکسپوژر - Exposure

اسکا مطلب ہے آپ اپنی تصویر کے لیۓ کتنی روشنی لینا چاہ رہے ہیں یا آپ جو مخصوص تاثر دینا چاہ رہے ہیں اسکے لیۓ کتنی روشنی (کم یا زيادہ) درکار ہے۔ جب آپ آٹو پہ ایکسپوژر سیٹ کرتے ہیں تو کمیرہ خودبخود شٹر سپیڈ، اپریچر اور ISO سیٹ کرتا ہے۔ جیسے اکثر نائٹ موڈ، ڈے موڈ، غروب آفتاب، سپورٹس، لینڈ سکیپ کے mode سے آٹو میٹک ایکسپوژر ملتے ہیں۔ نیچے موجود (بگلے والی) تصویر پر غور کریں۔ بائیں والی تصویر نارمل ایکسپوژر پہ ہے اور دائیں والی تصویر اپنی مرضی کے ایکسپوژر پر ہے۔ تکنیکی طور پر بائیں والی تصویر درست ہے لیکن دائیں والی تصویر خوبصورت اور attractive ہے۔ کیوںکہ ہم بگلے کو ایکسپوز نہیں کرنا چاہ رہے تھے بلکہ ہم غروب آفتاب کو ایکسپوز کرنا چاہ رہے تھے۔ سو ہم نے روشنی کو کنٹرول کرتے ہوۓ کم روشنی لی اور غروب آفتاب کو اہم اور خوبصورت کر کے دکھایا اور پرندے کی مخصوص موجودگی نے اسکی خوبصورتی میں مزید اضافہ کر دیا۔ بہترین ایکسپوژر وہ ہوگا جو آپ کی کھینچی گئی تصویر کو خوبصورت بنا دے

ایکسپوژر کے استعمال سے تصویر کی خوبصورتی میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔

اپریچر Aperture (روشنی کے لیۓ سوراخ)

جب ہم اندھیرے میں آنکھیں پھاڑ کے دیکھ رہے ہوتے ہیں تو اس وقت ہماری آنکھ کے لینز کا اپریچر پتلی کی مدد سے پورا کھلا ہوتا ہے تاکہ زیادہ سے زیادہ روشنی اندر جاۓ اور عکس واضح ہو۔ یعنی اپریچر کیمرے کا وہ پارٹ ہے جو یہ کنٹرول کرتا ہے کہ کتنی روشنی کو سینسر تک جانے دیا جاۓ۔اپریچر جنتا زيادہ اوپن ہو گا اتنی روشنی اندر جا سکے گی اور اتنی تصویر روشن ہو گی۔
فوٹوگرافی میں اسکی پیمائش الٹی گنتی سے ہوتی ہے۔ جیسے f-22 کا مطلب ہے اپریچر بہت ہی کم کھولا گیا ہے اور f-3.5 کا مطلب ہے اپریچر وائڈ اوپن ہے۔اپریچر کا دوسرا اہم کام ڈیپتھ آف فیلڈ Depth of Field یا فوکس رینج ہے۔ یعنی امیج کتنا شارپ یا دھندلا Blurry ہو۔ زیادہ اوپن اپریچر کی DOF کم ہوتی ہے اور کم کھلے اپریچر DOF یا فوکس رینج زیادہ ہوتی ہے۔ مثلا مجھے ایک بندے کا چہرہ شارپ اور پس منظر دھندلا دکھانا ہے تو میں اپریچر کم f پہ رکھوں گا یعنی زیادہ کھولوں گا ۔۔۔۔۔ اور اگر مجھے ایک وسیع لینڈ اسکیپ دکھانا ہے تو میں اپریچر کو زیادہ f پہ یعنی کم کھولوں گا۔

اپریچر کے مختلف پہلو

شٹر سپیڈ Shutter Speed

شٹر لینز اور امیجنگ سینسر کے درمیان ایک چھوٹا سا پردہ ہوتا ہے جو تب پیچھے ہٹتا ہے جب آپ اپنے پیرامیٹرز سیٹ کرنے کے بعد کلک کا بٹن دباتے ہیں یعنی تصویر کھینچتے ہیں۔ جیسے ہی شٹر کھلتا ہے روشنی سینسر پر پڑتی ہے اور امیج بنتا ہے۔ شٹر سپیڈ سیکنڈ سے پیمائش کی جاتی ہے مثلا 1/2 کا مطلب ہے شٹر سپیڈ آدھا سیکنڈ ہے ۔۔۔ 1/200 کا مطلب ہے شٹر ایک سیکنڈ کے 200 حصے میں اپنا کام کرے گا ۔۔۔۔ اس وقت 1/16000 شٹر سپیڈ کے کمیرہ موجود ہیں۔ نوکیا لومیا 1020 ماڈل کے موبائل فون میں نصب کیمرہ 1/16000 شٹر سپیڈ کا حامل ہے جو کہ اس لحاظ سے اسٹیٹ آف دی آرٹ ٹیکنالوجی موبائل کیمرہ ہے۔شٹر جتنی دیر اوپن ہو گا اتنی روشنی زيادہ اندر جاتی رہے گی اور جتنک کم عرصہ کھلے گا اتنی کم روشنی سینسر پر پڑے گی۔ اس لیۓ کم شٹر سپیڈ پہ کام کرنے کے لیۓ مصنوعی لائٹس کا بھی اہتمام کرنا پڑتا ہے۔
نیچے دی گئی تصویر پر غور کریں ۔۔۔ موصوف ہاتھ ہلا رہے ہیں نیچے والی میں شٹر سپیڈ 1/30 ہے تو کمیرہ نے ہلتے ہوۓ ہاتھ کو Motion Blur کردیا ۔۔۔ جبکہ اوپر والی تصویر میں شٹر سپیڈ 1/320 ہے یعنی شٹر بہت تیزی سے کھلا اور بند ہوا تو ہلتے ہوۓ ہاتھ کا بھی وہ لمحہ پکڑ لیا کہ ایسا لگ رہا کہ ہاتھ ساکن ہے۔

شٹر سپیڈ کا استعمال

آئی ایس او ISO

آئی ایس او کی ٹرم خواہ مخواہ بن گئی ہے یہ کوئی مخفف نہیں ہے۔ پرانے فوٹوگرافر I-So کہتے تھے اور اب ہر کوئی آئی ایس او کہتا ہے۔ ISO سے آپ سوفٹ ویئر کی مدد سے کمیرا کا ایکسپوژر کنٹرول کرتے ہیں۔ زیادہ ISO مثلا 1600 کا مطلب ہے زیادہ روشن تصویر اور کم ISO جیسے 100 کا مطلب ہے کم روشن تصویر۔ہائی ISO کا مسئلہ یہ ہے کہ اس سے تصویر میں ذرات grains نمایاں ہو جاتے ہیں مگر نیو ایڈوانسمنٹ میں اسکو بہتر سے بہتر بنانے کی کوششیں جاری ہیں۔ نیچے ISO والی تصویر پو غور کریں ۔۔۔۔۔ آپریچر اور شٹر سپیڈ دونوں میں ایک جیسی ہے مگر بائیں والی تصویر کا ISO 800 ہے ہے اور دائیں والی اسی تصویر کا ISO 25600 ہے۔ اس سے آپ کو ISO کے استعمال کا اندازہ ہو رہا ہو گا۔

ISO
نیچے ایک تصویر دو پہاڑی بھیڑوں کی بھی ہے۔ آئيے اس کو سٹڈی کرتے ہیں اور پچھلی اقساط میں بیان کئیے گئے بنیادی ٹولز کو اکھٹا کرتے ہیں۔ یہ دو پہاڑی بھیڑیں دراصل تیزی سے بھاگ رہیں ہیں۔ فوٹوگرافر نے 600mm لینز استعمال کیا ہے (جسکی قیمت کوئی 11 لاکھ کے قریب ہے ) اپریچر f/4 پہ رکھا ہے مطلب زيادہ کھولا ہے تاکہ زيادہ سے زيادہ لائٹ سینسر پر پڑ سکے ۔۔۔۔ شٹر سپیڈ 1/1000 مطلب بہت ہائی رکھی ہے کیونکہ بھیڑیں تیزی سے بھاگ رہی ہیں وگرنہ موشن بلر پیدا ہو جاۓ گا ۔۔۔۔ اب جب شٹر سپیڈ اتنی تیز ہو گی تو روشنی ایک سیکنڈ کے 1000 حصے میں سینسر تک جاۓ گی اور شٹر ساتھ ہی بند ہو جاۓ گا ۔۔ مطلب تصویر بہت ڈارک ہو گی ۔۔۔۔۔۔ یہاں پر ہائی 640 ISO کا استعمال کر کے اس ڈارکنس کو کنٹرول کیا گیا ۔۔۔۔ اور لمحہ قید کر لیا گیا۔

بہتر فوٹوگرافر بننے کے لیۓ ضروری ہے...

1-کہ آپ کو پتہ ہو آپ کیا چاہتے ہیں اور ساری توجہ اس لمحے کو قید کرنے پر ہو۔
2-اپنی آنکھوں سے اپنے ذہن میں مختلف کمپوزیشن بنائيں۔
3-آپریچر پر کنٹرول ہو جس سے فوکس رینج بنتی ہے۔
4-ہمیشہ تیار رہیں کیونکہ قیمتی لمحات بڑی تیزی سے آتے ہیں اور تیزی سے گزر جاتے ہیں۔
5-ایکسپوژر کی تکون (اپریچر، شٹر سپیڈ اور ISO) کے تصورات آپ کو واضح ہونے چاہیں۔
6-ماحول میں موجود روشنی اور مصنوعی روشنی کا استعمال کرنا سیکھيے۔
7-کیمرہ پر پکڑ مضبوط اور متوازن ہو۔
8-کمیرہ سیٹنگز کو چیک کرتے رہیۓ۔
9-کیمرے کے لینز کی کیپسٹی کے بارے میں معلومات ہونی چاہیۓ۔
10-اور آخری ایک ہی بات ۔۔۔۔۔ پریکٹس
دوستوں سے شیئر کریں

تبصرہ کریں