آج کل سرفراز احمد جوکہ پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان بھی رہ چکے ہیں اپنی فیملی کے ساتھ قرنطینہ میں وقت گزار رہے ہیں – سرفراز احمد پاکستان کرکٹ ٹیم کے وہ واحد کپتان ہیں جس کو یہ مقام حاصل ہے کہ وہ آئی سی سی چیمپئن ٹرافی جیتنے والے واحد پاکستانی کپتان ہیں – ان سے پہلے اور بھی بہت سے بڑے بڑے کپتان گزرے ہیں مگر یہ مقام صرف الله تعالی نے سابق کپتان سرفراز کو ہی دیا ہے۔

سننے میں آ رہا ہے کہ سرفراز احمد نے خود ہی اپنے آپ کو اور اپنی فیملی کو قرنطینہ میں لے جانے کا فیصلہ کیا  ہے اور وہ آجکل اپنی فیملی کے ساتھ گھر میں ہی وقت گزار رہے ہیں اور اس کی اصل وجہ بھی یہی ہے کہ کرونا وائرس سے جتنی بھی احتیاط کی جائے وہ کم ہے -اگر ہم بات کرنیں سرفراز احمد کے کیریئر کی تو ان کے کیریئر میں ایک دفعہ پھر جان آ گئی ہے جب سے ان کو پتہ چلا کہ ان کا نام انگلینڈ ٹور کے لیے شامل کر لیا گیا ہے۔

سرفراز احمد جوکہ اب 33 سال کے ہو گئے ہیں ان کو پچھلے سال اکتوبر میں کپتانی کے فرائض سے ہٹا دیا تھا اور نہ صرف کپتانی سے بلکہ وہ وکٹ کیپنگ سے بھی ہاتھ دھو بھیٹھے تھے اس کی اصل وجہ یہ تھی کہ وہ کپتانی کے ساتھ ساتھ اپنی بیٹنگ بھی ٹھیک تارہا سے نہیں کر پا رہے تھے – لہذا محمّد رضوان نے ان کی جگہ لے لی اور ابھی تک وہ اس جگہ پر براجمان ہیں۔

بس یہی نہیں سابق کپتان سرفراز احمد کو پچلے سال اپنی اے کیٹگری سے بھی ہاتھ دھونا پڑ گیا تھا اور ان کو کیٹگری بی میں ڈال دیا تھا- اس کے بعد سرفراز احمد نے دوبارہ فرسٹ کلاس کرکٹ کو جوائن کیا اور وہاں پر سنچری سکور کر کے اپنا لوہا منوایا اورپھر کرکٹ بورڈ نے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کر کے سرفراز کو دورہ انگلینڈ کے لیے سلیکٹ کیا۔

حال ہی میں ایک انٹرویو کے دوران ایک صحافی نے سرفراز احمد سے پوچھا کہ ان کے نزدیک دنیا کا کون سا بیٹسمن سب سے اچھا ہے تو انھوں نے فورا ویرات کوہلی کا نام لیا – انھوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ دنے میں اور بھی بہت سارے کرکٹر ہیں جوکہ بہت اچھا کھیلتے ہیں مگر ان کو ویرات کا سٹائل زیادہ اچھا لگتا ہے –۔

اسی انٹرویو کے دوران سرفراز احمد سے پوچھا گیا کہ کہ وہ پاکستان کی کس ادارکارہ کو سب سے زیادہ پسند کرتے ہیں اور ان کے سامنے 2 نام رکھے گیے ایک کا نام مہوش حیات اور دوسری کا نام آئزا خان تھا – تو انھوں نے فورا مہوش حیات کا نا لیا ۔–

پھر اس کے بعد ان سے بالی ووڈ کی پسندیدہ ادارکارہ کا نام پوچھا گیا اور اس میں بھی ان کے سامنے 2 نام رکھے گئے ایک کترینا کیف اور دوسری دپیکا پدوکون تو انھوں نے کہا کہ انھوں کترینا کیف کے بارے میں کہا کہ وہ ان کی پسندیدہ اداکارہ ہیں۔

اس کے ساتھ ساتھ سرفراز احمد نے یہ بھی کہا کہ وہ اس چیز کو بہت زیادہ مس کرتے ہیں کہ پاکستان اور انڈیا کہ آپس میں زیادہ سیریز نہیں ہو پاتی ہیں جوکہ دونوں ملکوں کے لیے کوئی اچھی علامات نہیں ہیں  – اس کے ساتھ انھوں نے یہ بھی کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان صرف یہی ایک چیز ہے جو دونوں ملکوں کو ایک دوسرے کے قریب لیکر آتی ہے اور اگر ہم نے اس پر بھی غور نہ کیا تو پھر اس طرح مزید دوریاں پیدا ہونے کا خطرہ ہے۔

دوستوں سے شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں