”حرمین شریفین کی حفاظت کی ذمہ داری ، پاکستان کا بڑا اعلان ، سعودی حکومت کو دو ٹوک پیغام بھجوا دیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک ) چیئر مین سینیٹ صادق سنجرانی نے کہا ہے کہ پاکستان اسرائیل کو کبھی تسلیم نہیں کر سکتا،

سرائیل کے حوالے سے متحدہ عرب امارات کے فیصلے کے دور رس نتائج ہوں گے، حرمین شریفین کی حفاظت کیلئے کسی قربانی سے گریز نہیں کیا جائے گا۔پارلیمنٹ ہاؤس میں چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی اور

سعودی سفیر کے درمیان ملاقات ہوئی جس میں دوطرفہ تعلقات سمیت اہم امور پر گفتگو کی گئی۔ اس موقع پر چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ ہر مشکل وقت میں دونوں ممالک ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے رہے ہیں، ہمیشہ بین الاقوامی معاملات اور مسائل پر مشاورت سے کام کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان اسرائیل کو کبھی تسلیم نہیں کر سکتا، اسرائیل کے حوالے سے متحدہ عرب امارات کے فیصلے کے دور رس نتائج ہوں گے، پارلیمنٹ بالخصوص ایوان بالا کی جانب سے اس عزم کا اعادہ کرتے ہیں کہ حرمین شریفین کی حفاظت کیلئے کسی قربانی سے گریز نہیں کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان سعودی عرب کی جانب سے ہر مشکل وقت میں پاکستان کے ساتھ کھڑے رہنے کو کبھی فراموش نہیں کر سکتا، امید کرتے ہیں کہ سعودی عرب بھی اسی جذبے کے ساتھ تعاون جاری رکھے گا۔

چیئرمین سینیٹ کی جانب سے سعودی عرب کے بادشاہ شاہ عبداللہ اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کیلئے نیک خواہشات کا اظہار بھی کیا گیا۔دوسری جانب کامران بخاری نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کا کو تسلیم کرنا حیران کن بات نہیں ہے، سعودی عرب مستقبل قریب میں اسرائیل کو تسلیم نہیں کرے گا،

متحدہ عرب امارات ترکی کو کاؤنٹر کرنے کیلئے ایران کو استعمال کررہا ہے،اسرائیل کبھی بھی ایران عرب جنگ میں عربوں کی مدد نہیں کرے گا۔ماہر مشرق وسطیٰ امور کامران بخاری نےنجی ٹی وی پروگرام میں کہا کہ متحدہ عرب امارات کا اسرائیل کو تسلیم کرنا حیران کن بات نہیں ہے،

دونوں ملکوں کے درمیان گفت و شنید ڈھکی چھپی بات نہیں ہے،سعودی عرب مستقبل قریب میں اسرائیل کو تسلیم نہیں کرے گا، سعودی عرب میں سلفی اسلام ایک قوت ہے اس لئے اسرائیل کو تسلیم کرنا ان کیلئے مشکل ہے، سعودی عرب کی بھی اسرائیل سے بات چیت منظرعام پر ہے، یو اے ای کی آبادی بہت کم ہے اس لئے ان کیلئے اسرائیل کو تسلیم کرنا آسان تھا۔

کامران بخاری کا کہنا تھا کہ ترکی اپنے مخالف یو اے ای پر تنقید کا کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دے گا، متحدہ عرب امارات موجودہ صورتحال میں قطر کے جوابمیں  خود کو لیڈر کے طور پر سامنے لارہا ہے، یو اے ای اسرائیل کے ساتھ ایران سے بھی تعلقات بڑھارہا ہے، متحدہ عرب امارات ترکی کو کاؤنٹر کرنے کیلئے ایران کو استعمال کررہا ہے۔

کامران بخاری نے کہا کہ اسرائیل اپنے مفادات کیلئے عرب ممالک سے تعلقات بنارہا ہے، اسرائیل کبھی بھی ایران عرب جنگ میں عربوں کی مدد نہیں کرے گا، ایران اور ترکی ایک صفحہ پر نہیں ہیں بلکہ تاریخی حریف ہیں، ایران شام اور عراق میں ترکی کا راستہ روک رہا ہے، مستقبل میں ایران اور ترکی خطے اثر بڑھانے کیلئے حریف ہوں گے۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Articles You May Like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *