×

بھارتی وزیراعظم کی بھی دن پوری متبادل کے طور پر کون سامنے آ رہا

اسلام آباد (نیوز ڈسک) سینئر کالم نگار مظہر برلاس اپنے کالم ’’عاصم باجوہ کی تیز رفتاری‘‘ میں لکھتے ہیں۔ چین نے باقی ملکوں کو آپنے بہت بڑے منصوبوں میں شامل ہونے کی آفر کی تھی۔ لیکن ساری دنیا کو اس کی یہ پیشکش راس نہ آئی بلکہ انہوں نے ان کے راستے میں کانٹے بکھیرنا شروع کر دیں۔ انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کی چین نے بہت بڑے منصوبوں پر کام کیا ہے۔

جیسا کہ جبوتی، حیفا، کولمبو، ہربن ٹوٹا اور میانمار کی بندرگاہ سمیت کئی بندرگاہیں موجود ہیں مگر ان سب میں اہم بندرگاہ گوادر ہے۔ ایس کے اہمیت کی وجہ سے بہت سے ممالک پاکستان اور چین کی دشمن بن چکی ہے۔ اور ان کی مخالفت کی اہم وجہ صرف یہی ہے کہ وہ ایک مسلمان ایٹمی ملک کو معاشی طور پر مضبوط اور مستحکم بالکل بھی نہیں چاہتے۔اسی لئے خاص طور پر انڈیا، اسرائیل، امریکہ اور چند مسلمان ممالک گوادر کا نام سنتے ہی ماہی بےآب کی طرح تڑپنا شروع کر دیتے ہیں۔ ہمارے اس منصوبے کو خراب کرنے کیلئے اجیت کمار دوول نے کئی جال بچھائے، بڑی منصوبہ بندی کی مگر خدا کا شکر ہے اس کے سب منصوبوں پر پانی پھر گیا اور گوادر کا سفر کامیابی سے جاری ہے۔کل تک بھارت میں شاباش وصول کرنے والا اجیت کمار دوول آج منہ چھپاتا پھر رہا ہے، چینی فوج سے مار کھانے کے بعد دہلی کے کئی اجلاسوں میں دوول کو دھو کر رکھ دیا گیا۔ اس کے علاوہ مولوی کی بھی مخالفت کل کر شروع ہوچکی ہے۔ جس کی وجہ سے اب یہ سننے میں آرہا ہے کہ بھارتی جنتا پارٹی نے مودی کے متبادل کے طور پر امیت شاہ پر غور شروع کر دیا گیا ہے۔

Sharing is caring!

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں