زندگی کے مقاصد کو سنجیدہ لیں

زندگی کے مقاصد

فرض کیا آپ نے کوئی مقصد یا Goal طے کیا اور آپ اسے حاصل نہ کر سکے. یہ اتنا بڑا مسئلہ نہیں جتنا آپ بار بار مختلف مقاصد طے کرتے ہیں اور بار بار وہ رے جاتے ہیں. کیونکہ یہ آپ کی کمزور احساس ذمہ داری بن جاتی ہے. یعنی ایسے فرد کے بارے میں کہا جاسکتا ہے کہ اسے رشتوں کا احساس نہیں.

واضح طے کیا ہوا ہمارا مقصد تب ہی مکمل ہوتا ہے جب ہم اس سے رشتہ بنا لیں. مقصد آپ کے بچے کی طرح ہوتا ہے. اس بچے کی تربیت نشوونما اور پرورش ماں یا باپ کی طرح کی جاتی ہے. کون ایسا شخص ہوگا جس کا بچہ بیمار ہو اور وہ اسے توجہ نہ دے.؟ کیا جیتے جی بچے کو یتیم رکھنے والے کو ہم ایک اچھا ذمہ دار والد کہہ سکتے ہیں.؟ کچھ لوگ روزانہ کی بنیاد پر کئی بچے پیدا کر کے چھوڑ دیتے ہیں. کیا ایسے فرد کو سنجیدہ کہا جاسکتا ہے.؟

اس لئے اپنے goals کو سنجیدہ لیں. اس سنجیدگی کیلئے اسے واضح با مقصد اور قابل حصول رکھیں. اسے بچے کی طرح نام دیں اور اس کی عمر کا حساب رکھیں. تاکہ آپ اسکا پہلی بار گوڈوں چلنا یا اسکے پہلے قدم کا انتظار اور اسکا حساب رکھ سکیں. یاد رکھیں بچوں کی طرح یہ بھی صبر اور استقامت کا سفر ہے. اللہ رب العزت سے ان کی زندگی اور کامیابی کیلئے ہر دم دعا مانگیں.

 تحریر : ریاض علی خٹک

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *