دریائے سوات میں چھلانگ لگا کر بےزبان جانور کی زندگی بچانے والا ہیرو

میں تو نماز پڑھنے کے لیے مسجد جا رہا تھا۔ وہاں پر دیکھا کہ کسی مزدور کی ریڑھی کھڑی ہے اور یہ سوچ کر کہ کہیں وہ دریا میں بہہ نہ جائے سوچا کہ چلو اس کو سائیڈ پر کرتا ہوں۔ مگر جب ریڑھی کو محفوظ کرنے گیا تو کسی نے بتایا کہ دریا کے اس طرف کتا بھی موجود ہے تو میرے دل اور ضمیر نے گوارہ نہیں کیا کہ میں کتے کو تیز رفتار پانی میں مرنے کے لیے چھوڑ دوں۔‘

یہ کہنا تھا صوبہ خیبر پختونخواہ کے ضلع سوات کے علاقے بحرین کے افسر خان کا۔

افسر خان کی وہ ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے جس میں وہ منگل کو اونچے درجے کے سیلاب اور تیز رفتار لہروں کے دوران پانی سے تباہ ہونے والی عمارت کے ملبے کے پاس کھڑے ہیں اور اردگرد موجود لوگ شور مچا رہے ہیں۔

ملبے کے پاس کھڑے ہو کر وہ لوگوں سے کچھ پوچھتے ہیں۔ پھر ملبے میں ہاتھ ڈالتے ہیں۔ ایک کتے کو گردن سے دبوچ کر تیز رفتار لہروں میں سے ہوتے ہوئے واپسی کے لیے مڑ جاتے ہیں۔

جب افسر خان کتے کو پکڑ کر واپسی کی راہ لیتے ہیں تو سینکڑوں کا مجمع خوشی سے تالیاں بجاتا ہے اور بھرپور خوشی کا اظہار کرتا ہے۔

افسر خان کی اس ویڈیو پر ان کو ہر طرف سے شاندار انداز میں خراج تحسین پیش کیا جا رہا ہے۔

افسر خان کون ہیں؟

جب افسر خان کی تلاش کے لیے بحرین میں رابطے کیے گئے تو ان کی تلاش میں زیادہ وقت نہیں لگا۔ وہ علاقے میں مشہور و معروف ہیں۔

بحرین کے مقامی لوگوں کے مطابق افسر خان بحرین میں تبلیغی جماعت کے امیر ہیں۔

یہاں کلک کر کے شیئر کریں

Articles You May Like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *